ہوم / طاہر بھٹی

طاہر بھٹی

خواب اس آنکھ میں بھریں کیسے۔۔۔۔!غزل۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی

خواب اس آنکھ میں بھریں کیسے۔۔۔۔!غزل۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی دیپ کچھ تھے ، مگر جلے ہی نہیں دید کے سلسلے ، چلے ہی نہیں کیسی قوس قزح ہے آنکھوں میں ہم تو اس شوخ سے ملے ہی نہیں آئینے دم بخود تحیر میں۔۔۔! شیشہ رو کے یہ مسئلے ہی نہیں چشم

مزید پڑھیے

کچھ تمہارے بھی دھیان پڑتی ہے۔۔۔۔؟ طاہر احمد بھٹی

سن 2012 ہو گا، میں اسلام آباد کے لئے گھر سے سامان کار میں ڈال کے نکلا ہی تھا اور ابھی اپنے شھر کے اپنے محلے دارلنصر والی کالج روڈ پہ ہی تھا کہ جدید پریس کے ساتھ پولیس چوکی کے سامنے ایک ٹریفک کے سپاہی نے "بلا اشتعال” یعنی

مزید پڑھیے

کنکاں چھڈ،۔۔۔۔۔کپاہ لینے آں)…..پنجابی غزل، ۔۔۔طاہر احمد بھٹی)

(کنکاں چھڈ ، کپاہ لینے آں) تیرے ساہیں، ساہ لینے آں ساہ کیہڑے نے، پھاہ لینے آں راتیں کوڑیاں سچیاں کر کے دن دیاں کندھاں ڈھاہ لینے آں بھکھ تے مر گئی، ننگ ای کج لو کنکاں چھڈ،۔۔۔۔۔۔کپاہ لینے آں ایس لئی جھولی خالی رہ گئی اوہ لینے آں،۔۔۔۔۔آہ لینے

مزید پڑھیے

ِخاباں وچ ہنھیری اے، ۔۔۔۔۔۔۔پنجابی غزل، طاہر احمد بھٹی

(خاباں وچ ہنھیری اے) کدوں ایہہ چناں میری اے ساری کھیڈ ای، تیری اے سدھراں ایویں چت نئیں چایا خاباں وچ، ۔۔۔۔۔ ہنھیری اے توں ڈبیں، یا میں رڑ جاواں اکو ای گھمن گھیری اے چا توں سکھ، میں دکھ لے جاواں آپنی آپنی،۔۔۔۔۔ ڈھیری اے جیٹھ دے پھہلیاں چپ

مزید پڑھیے

کچھ اپنے دل پر بھی زخم کھاو،۔۔۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی

ہمارے ایک رشتے میں چچا سیف اللہ بھٹی مرحوم سن اسی کی دہائی کے اوائل میں پاکستان میں اپنا کلسیاں بھٹیاں کا زمیندارہ اور ڈیرے داری تیاگ کر امریکہ کی ریاست ہیوسٹن میں جا آباد ہوئے۔ کم گو، نفیس طبع اور غور و فکر کر کے بے ضرر مگر دیرپا

مزید پڑھیے

جرمنی اپنے شہریوں کے سول رائیٹس کے ایک دھیلے پر بھی سمجھوتا نہیں کرتا۔۔۔۔۔اداریہ

گزشتہ ہفتے جرمنی کے علاقے ایرفرٹ میں جماعت احمدیہ کی مسجد کے سنگ بنیاد رکھے جانے کی تقریب نے ملک بھر کے میڈیا میں خاص اہمیت حاصل کئے رکھی۔ مسجدیں تو جماعت احمدیہ جرمنی پچاس سے زائد تعمیر کر چکی ہے اور سو کی تعداد کا ٹارگٹ ہے لیکن اس

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔ دل کی حالتوں پہ اب گفتگو اضافی ہے ہو بہ ہو کے قضئیے میں، من و تو اضافی ہے دید کا تقاضا ہے، دل کا دم بخود ہونا رو برو کے لمحوں میں، ہاوء ہو اضافی ہے ان کی دلنوازی پر بات آئے گی ورنہ دل کے آئینے میں

مزید پڑھیے

بس اب کے اتنی تبدیلی ہوئی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی

موجودہ حکومت جب "جمہوریت” کے پیٹ میں تھی تو تبدیلی تبدیلی کا وہ شور پڑنا شروع ہوا جو آج تک تھمنے میں نہیں آتا۔ تبدیلی کا لفظ اس طرح اس نئے حکومتی نظم و نسق سے پیوست ہوا کہ اب تبدیلی کہتے ہی عمران خان اور حواری اور ان کے

مزید پڑھیے

پنجابی غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی

غزل اوہلا چانن پی جاندا اے ویلا پھٹ نوں سی جاندا اے تینوں ویکھ کے اندرو اندری آپے دل پرچی جاندا اے آوندا جاندا ویکھ لیا کر جھلیا ، تیرا کی جاندا اے سدھراں نوں گل گھوٹو دے کے بندہ مر مر جی جاندا اے آس جے تیتھوں پھٹ نہ

مزید پڑھیے

ریاست مدینہ، حقائق کے آئینے میں۔۔۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی

آج دو ہفتے ہونے کو آئے کہ دور و نزدیک سے پاکستان میں ریاست مدینہ کے ماڈل کے احیاء نو کے چرچے سننے کو مل رہے ہیں۔ ہمیں ذاتی طور پر تو پہلے دن سے ہی واضح تھا کہ یہ نئے ہاتھی کے دکھانے کے دانت ہیں۔ اس کو سنجیدگی

مزید پڑھیے

Send this to friend