ہوم / کلچر/فنون لطیفہ

کلچر/فنون لطیفہ

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔احمد منیب

چاند نکلا تو سمندر کے کنارے جاگے لوگ سب سو گئے تب درد کے مارے جاگے ہر ستارے کو بتا دو جو ہیں راتوں کے الم جو ہمارا ہے وہی ساتھ ہمارے جاگے حبس ایسا تھا کہ تحریر کا دم گھٹتا تھا اس نے لکھا تھا تو حرفوں کے ستارے

مزید پڑھیے

پنجابی غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی

غزل اوہلا چانن پی جاندا اے ویلا پھٹ نوں سی جاندا اے تینوں ویکھ کے اندرو اندری آپے دل پرچی جاندا اے آوندا جاندا ویکھ لیا کر جھلیا ، تیرا کی جاندا اے سدھراں نوں گل گھوٹو دے کے بندہ مر مر جی جاندا اے آس جے تیتھوں پھٹ نہ

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صائمہ امینہ شاہ

غزل یہ میری آنکھوں کے جگنوؤں میں جو اک چمک ہے تمہیں نا دے دوں یہ میرے چاروں طرف جو پھیلی ہوئی دھنک ہے، تمہیں نا دے دوں زمانے بھر کی ہے خاک چھانی، تھکن کے صحرا میں پاؤں چھلنی تمہیں نہ پا کر جو دل میں ٹھہری ہوئی کسک

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔قابل اجمیری، مراسلہ۔۔۔۔۔از ظفر قابل اجمیری

عشق میں تازکی ہی رہتی ہے وہ نظر ، چھیڑتی ہی رہتی ہے میری راتیں اجڑ گئیں اے دوست اب یہاں روشنی ہی رہتی ہے جانے کیا ہو پلک جھپکنے میں زندگی جاگتی ہی رہتی ہے لاکھ وہ بے نیاز ہو جائے حسن میں دلکشی ہی رہتی ہے زہر بھی

مزید پڑھیے

جاو اب روتے رہو ، نظم، ۔۔۔۔رفیق سندیلوی

تُم نہیں جانتے اِس دُھند کا قصّہ کیا ہے دُھند جس میں کئی زنجیریں ہیں ایک زنجیر کسی پُھول ،کسی شبد کسی طائر کی ایک زنجیر کسی رنگ کسی برق کسی پانی کی زلف و رُخسار لب و چشم کی،پیشانی کی تُم نہیں جانتے اِس دُھند کا زنجیروں سے رشتہ

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔ از ، صائمہ امینہ شاہ

جدا ہوکر بہت رویا گیا ہے محبت میں سبھی کھویا گیا ہے میری آنکھیں بھی جیسے لے گیا وہ نہ آئی نیند ، ناں سویا گیا ہے نہیں ہے اب کوئی بھی داغ اس پر یہ دل اشکوں سے یوں دھویا گیا ہے بڑی زرخیز ہے یہ کشت الفت یہاں

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صائمہ شاہ

چہرہ تراش لانے سے پہلے کی بات ہے آئینہ ٹوٹ جانے سے پہلے کی بات ہے فصل بہار آنے سے پہلے کی بات ہے یہ تیرے مسکرانے سے پہلے کی بات ہے آتی نہ تھی کبھی مرے لفظوں میں روشنی اپنا لکھا مٹانے سے پہلے کی بات ہے اک مضمحل

مزید پڑھیے

ڈاکٹر وزیر آغا سے ایک تنقیدی نشست۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

میں جب بھی لاہور جاتا، ڈاکٹر وزیر آغا کے دولت کدے پر ہی ٹھہرتا۔ اوپر والی منزل پر ایک طویل و عریض کمرہ اور غسل خانہ میری عارضی املاک تھے۔ شام تک تو احباب (جن میں ڈاکٹر انور سدید اور شاہد شیدائی سرِ فہرست تھے) بیٹھے رہتے اور ہم دنیا

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صائمہ شاہ

دیے کو پھونک ماری جا رہی ہے شبِ فرقت گزاری جا رہی ہے تمہارا راستہ ہے جس جگہ پر وہیں منزل ہماری جا رہی ہے تمہاری آنکھ میں دیکھا ہے خود کو تو کیا قسمت سنواری جا رہی ہے؟ یہ کس حسرت کے پیچھے لے کے مجھ کو مری بے

مزید پڑھیے

ایک چھوٹے کی بڑی باتیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سعدیہ تسنیم سحر، جرمنی

گاڑی نے ایک ہچکی لی اور ڈیڈ ……..میں نے ایک دو دفعہ پھر اسے سٹارٹ کرنے کی کوشش کی تو ایک شرمایا شرمایا سا کھر ……کھر …….کر کے چپ کر گئی۔ "آج کا سارا دن ہی بکواس گزرا ۔باس کی شوگر کوٹیڈ طعنے اور گالیاں برفی سمجھ کر کھائیں اور

مزید پڑھیے

Send this to friend