ہوم / کلچر/فنون لطیفہ (page 4)

کلچر/فنون لطیفہ

پنجابی اشعار۔۔۔۔۔۔۔۔۔از طاہرہ سراء

کی کیندا ایں میرے تے اعتبار نئیں مطلب، تینوں تیرے تے اعتبار نئیں اوہدے پنڈوں کاں تے اوندے ہوون گے مینوں ایس بنیرے تے اعتبار نئیں۔ ☆☆☆☆☆☆☆☆☆☆☆☆☆☆ غزل اوہدا چیتا نال ہوندا اے اک اک شعر کمال ہوندا اے ہجر نوں کشتہ کردی پئی آں ویکھو کدوں وصال ہوندا اے

مزید پڑھیے

طے شدہ مسئلہ۔۔۔۔۔۔۔۔از قلم ارشاد عرشی ملک

"طے شدہ مسئلہ”‬ ‎( ایک مسئلہ جو سن چوہتر تک نوے سالہ مسئلہ کہلاتا تھا،اب طے شدہ مسئلہ کہلاتا ہے) ‎ارشاد عرشیؔ ملک ‎مَت کہو مہرباں،طے شُدہ مسئلہ ‎ہے مسائل کی ماں  ،طے شُدہ مسئلہ ‎لب پہ مہرِ خموشی لگائے ہوئے ‎رہ گیا بے زباں ،”طے شُدہ مسئلہ ‎سالہا سال

مزید پڑھیے

میرا جی۔۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

ستیہ پال آنند میرا جیؔ کے بارے میں (وزیر آغا (مرحوم) سے بحثا بحثی کی ایک واردات)میں جب بھی لاہور جاتا، ڈاکٹر وزیر آغا کے دولت کدے پر ہی ٹھہرتا۔ اوپر والی منزل پر ایک طویل و عریض کمرہ اور غسل خانہ میری عارضی املاک تھے۔ شام تک تو احباب

مزید پڑھیے

خاموش رہیں گے۔۔۔۔۔۔۔ارشاد عرشی ملک

خاموش رہیں گے (حالاتِ حاضرہ کے تناظر میں ایک نظم) ارشاد عرشیؔ ملک اللہ سے سجدے میں ،جو کہنا ہے کہیں گے خاموش تھے،خاموش ہیں ،خاموش رہیں گے اُس دیس میں جیون ہے کوئی خواب ، ڈراؤنا نفرت جہاں چادر ہو ،تعصب ہو بچھونا نسلوں سے یہی مشقِ ستم ،دیکھ

مزید پڑھیے

مغموم عید مبارک۔۔۔۔۔از آئینہ ابصار

کوئٹہ ، پاڑا چنار ، کراچی اور احمد پور شرقیہ ۔ ۔ ۔ سانحے پہ سانحہ ۔ ۔ اور عید مبارک اے اڑتی ہوئی خاک_ چمن ، عید مبارک اے سہمی ہوئی ارض_ وطن ، عید مبارک مقتول اجالوں کا لہو دیکھنے والو لو چاند سے کہتا ہے گہن ،

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔میثم علی آغا

کوئی تو ایسا وظیفہ ہو کہ حیرانی ہو میں اِدھر ایڑی رگڑ دوں تو اُدھر پانی ہو دشتِ وحشت میں کھڑے خشک شجر رب راکھا ہم فقیروں کی دعائیں ہیں کہ آسانی ہو عشق متروک صحیفہ ہے سو اس کو لے کر دلِ ویران وہاں چل جہاں ویرانی ہو اے

مزید پڑھیے

رفیع رضا کی بہترین تضمین ۔۔۔۔۔۔۔قطری کا بچہ

قطری کا بچہ کھاتا تھا پیسے پیتا تھا لسّی لاتا تھا نامے جنرل تھے مامے اک دن مشرّف رستے میں آیا اُس کو اُڑایا واپس پھر آیا فوجوں سے مِل کر جیتا الیکشن عمران لیکن پاگل تھا کوئی دھرنے پہ دھرنا دینے لگا تھا آخر عدالت لے کر ھی آیا

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صفوان احمد ملک

منتشر سوچوں سے لفظوں پر نہیں اب اختیار چھین لے یادوں کو میری لفظ دے دے مستعار پھر کوئے جاناں میں رسوا ہو رہا ہے آدمی پھر وہی تلخی کے دن ہیں پھر وہی در در کی مار اُس کی یادوں کے دیے کی لَو جو تھرّاتی رہی فرض کی

مزید پڑھیے

نظم۔۔۔۔۔۔۔۔۔شہامت سلطان

    اس وقت اگر تُم آ جاوٗ جب شام ڈھلے سُکھ ساحل پر اک گَھور سمے کا پہرہ ہو جب رات کے اجلے سینے پر بیداد کا سایہ گہرا ہو جب آنکھ کی پتھر بستی میں اک کانچ کا آنسو ٹھہرا ہو اور خواب کے پیڑ سے جھڑنے والے

مزید پڑھیے

Send this to friend