ہوم / زبان و ادب

زبان و ادب

ادب پہلا قرینہ ہے محبت کے قرینوں میں

نظم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صائمہ شاہ

سنو جاناں محبت کر تو لیتے ہیں مگر اتنا سمجھ لینا، محبت کانچ جیسی ہے کبھی یہ چاند بن کر وصل کی راتوں میں آتی ہے کبھی اشکوں میں ڈھل کر ہجر کے صدمے اٹھاتی ہے کبھی اک آگ بن جاتی ہے، جلتی اور جلاتی ہے محبت آنچ جیسی ہے

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فرحت عباس شاہ

تم جو مر جاؤ تو خالق کی رضا نے مارا میں ہی وہ ہوں کہ جسے ٹھیک قضا نے مارا َموت بر حق ہے یہ ایمان ہے میرا لیکن تم مجھے مار کے کہتے ہو خدا نے مارا ایک شاعر کہاں کر سکتا ہے خود کش حملہ تم مرو گے

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔ دل کی حالتوں پہ اب گفتگو اضافی ہے ہو بہ ہو کے قضئیے میں، من و تو اضافی ہے دید کا تقاضا ہے، دل کا دم بخود ہونا رو برو کے لمحوں میں، ہاوء ہو اضافی ہے ان کی دلنوازی پر بات آئے گی ورنہ دل کے آئینے میں

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔احمد منیب

چاند نکلا تو سمندر کے کنارے جاگے لوگ سب سو گئے تب درد کے مارے جاگے ہر ستارے کو بتا دو جو ہیں راتوں کے الم جو ہمارا ہے وہی ساتھ ہمارے جاگے حبس ایسا تھا کہ تحریر کا دم گھٹتا تھا اس نے لکھا تھا تو حرفوں کے ستارے

مزید پڑھیے

پنجابی غزل۔۔۔۔۔۔۔۔ایوب کموکا

غزل ترے ہتھ دے اشارے تے کھلوتاں اجے دوجے کنارے تے کھلوتاں جے اکھ جھمکی تے ڈگنائیں وانگ اتھرو میں پلکاں دے چبارے تے کھلوتاں بنا کے ریت دے گھر پانیاں تے دعاواں دے سہارے تے کھلوتاں ہوا نکلی تے آجاناں ایں تھلے میں ساہواں دے غبارے تے کھلوتاں توں

مزید پڑھیے

پنجابی غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی

غزل اوہلا چانن پی جاندا اے ویلا پھٹ نوں سی جاندا اے تینوں ویکھ کے اندرو اندری آپے دل پرچی جاندا اے آوندا جاندا ویکھ لیا کر جھلیا ، تیرا کی جاندا اے سدھراں نوں گل گھوٹو دے کے بندہ مر مر جی جاندا اے آس جے تیتھوں پھٹ نہ

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صائمہ امینہ شاہ

غزل یہ میری آنکھوں کے جگنوؤں میں جو اک چمک ہے تمہیں نا دے دوں یہ میرے چاروں طرف جو پھیلی ہوئی دھنک ہے، تمہیں نا دے دوں زمانے بھر کی ہے خاک چھانی، تھکن کے صحرا میں پاؤں چھلنی تمہیں نہ پا کر جو دل میں ٹھہری ہوئی کسک

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔قابل اجمیری، مراسلہ۔۔۔۔۔از ظفر قابل اجمیری

عشق میں تازکی ہی رہتی ہے وہ نظر ، چھیڑتی ہی رہتی ہے میری راتیں اجڑ گئیں اے دوست اب یہاں روشنی ہی رہتی ہے جانے کیا ہو پلک جھپکنے میں زندگی جاگتی ہی رہتی ہے لاکھ وہ بے نیاز ہو جائے حسن میں دلکشی ہی رہتی ہے زہر بھی

مزید پڑھیے

جاو اب روتے رہو ، نظم، ۔۔۔۔رفیق سندیلوی

تُم نہیں جانتے اِس دُھند کا قصّہ کیا ہے دُھند جس میں کئی زنجیریں ہیں ایک زنجیر کسی پُھول ،کسی شبد کسی طائر کی ایک زنجیر کسی رنگ کسی برق کسی پانی کی زلف و رُخسار لب و چشم کی،پیشانی کی تُم نہیں جانتے اِس دُھند کا زنجیروں سے رشتہ

مزید پڑھیے

پنجابی بولیاں۔۔۔۔۔۔۔مراسلہ و انتخاب از، ایوب کموکا

تینوں کوٹھے اتے چڑھ کے ویہندا جے چھت میرا بھار جھَلدی اساں اکھیاں نوں بھر لے تروپے پتناں توں یار ٹورکے کدی تیل وچ تلے نی پکوڑے وچھوڑیاں دی گل کرنائیں جدوں مٹی دیاں روٹیاں پکائیاں تے بالاں میرے پیر پَھدھ لے پُٹھا ٹنگ کے تے میرے کولوں پچھدائے توں

مزید پڑھیے

Send this to friend