ہوم / زبان و ادب (page 10)

زبان و ادب

ادب پہلا قرینہ ہے محبت کے قرینوں میں

نظم "یاد دہانی” از قلم ثاقب زیروی

قیام پاکستان کے بعد خواجہ ناظم الدین کی زیر صدارت مغربی اور مشرقی پاکستان میں سپر ہٹ ہونے والی نظم جس کو آفاق، احسان، زمیندار سمیت تمام اخبارات نے جلی سرخیوں سے رپورٹ کیا اور اب یہ نظم اپنے شاعر سمیت حافظے اور تاریخ سے کھرچی جا رہی ہے۔۔۔۔۔۔۔لیکن اس

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔شہامت سلطان

غزل لِکّھوں یا اپنا کا حال لِکّھوں میں کیا کیا شامت اعمال لِکّھوں تیرے آنے کا دھڑکا سا لگا ہے دلِ بے تاب کا احوال لِکّھوں زمانہ رُک کے مجھ کو دیکھتا ہے میں اس روداد کو تا حال لِکّھوں تماشہ بن کے دیوانے نے سوچا میں دانائی کے خدو

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چوہدری محمد علی مضطر

کچھ وہی لوگ سرفروش رہے موت کا ڈر نہ جن کو ہوش رہے آپ نے بات بات پر ٹوکا ہم سردار بھی خموش رہے کس قدر وضعدار ہیں ہم لوگ قبر میں بھی سفید پوش رہے ہم خطا کارتھے بہر صورت وہ بہر حال عیب پوش رہے بیٹھے بیٹھے وہ

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔شہامت سلطان

اس دل سے اس زباں تک صدیوں کا فاصلہ ہے ابہام میں رواں یہ لفظوں کا قافلہ ہے احساس کو مکمل تو دوریاں کریں گی تخصیص حرفو معنی اک اور سلسلہ ہے پھر کن کی آہٹوں سے الفاظ جاگ اٹھے ہیں برسوں کے بعد مجھ سے وہ آج پھر ملا

مزید پڑھیے

حافظہ بدل دیجئے ………. محبوب اختر

حافظہ بدل دیجئے پرانی اک کہانی ہے نغمگی کا امریکہ ہم سے دور بستا تھا تاریخ سرخ ہندی کی قصہ گو سناتے تھے دستور دل پہ لکھے تھے وارث شاہ نہیں تھے یاں ہیر کی کہانی تھی وہ بھی سب زبانی تھی دیس کے شجر سارے روح لے کے اگتے

مزید پڑھیے

نظم۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی

سوچ سر اٹھاتی ہے۔۔۔۔ سوچ سر اٹھاتی ہے نیم باز آنکھوں کو بار بار تکتی ہے۔ مختلف طریقوں سے ایک بات کہتی ہے دھیمے دھیمے لہجے میں نیم باز آنکھوں سے پوچھتی ہے آنکھوں سے کب تلک تماشا ہے؟ کہاں تک امیدوں کا افق جگمگاتا ہے کب تلک یہ جگنو

مزید پڑھیے

پنجابی نظم۔۔۔۔۔۔۔ابرار ندیم

اتھرو تارا ھو سکدا اے دکھ دا چارا ھو سکدا اے اکو واری فرض تے نئیں ناں عشق دوبارا ھو سکدا اے ککھوں ہولا جان نہ سانوں ککھ وی بھارا ھو سکدا اے اجے نہ رشتے توڑ توں سارے اجے گزارا ھو سکدا اے کدی کدائیں جان دا دشمن جان

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔قابل اجمیری

غزل حیرتوں کے سلسلے سوز نہاں تک آ گئے ہم نظر تک چاہتے تھے تم تو جاں تک آ گئے نامرادی اپنی قسمت، گمرہی اپنا نصیب کارواں کی خیر ہو، ہم کارواں تک آ گئے۔ ان کی پلکوں پر ستارے، اپنے ہونٹوں پر ہنسی قصہ ء غم کہتے کہتے ہم

مزید پڑھیے

سید وحید الزمان کے چار اشعار

سید وحیدالزمان شاہ کے اشعار جستہ جستہ ہم پیش کرتے رہتے ہیں۔ مقصد ایک تو مرحوم دوست کی شعری یادوں کی باز آفرینی ہوتا ہے اور دوسرا یہ کہ کسی طرح ان کے متفرق اشعار یکجا ہوتے جائیں۔ اگرچہ یہ بھی حقیقت ہے کہ باریک جمالیاتی اظہار بھی ساتھ ہی

مزید پڑھیے

Send this to friend