ہوم / نیوز/حالات حاضرہ

نیوز/حالات حاضرہ

جو دل کو ہے خبر کہیں ملتی نہیں خبر۔۔۔۔۔۔!

مولانا کی الٹی تصویر۔۔۔۔۔۔۔۔۔اصغر علی بھٹی

ہوٹل کے دروازے پر لٹکتی مولانا فضل الرحمٰن صاحب کی الٹی فوٹو سینٹ کے حالیہ سیشن میں مولانا فضل الرحمٰن صاحب کی جماعت سے تعلق رکھنے والے ایک معزز سینٹر صاحب نے جو خود بھی مولانا ہیں نے وزیر اعظم پاکستان کے حوالے سے کلام شروع کیا تو جناب چئیرمین

مزید پڑھیے

بات ہے رسوائی کی۔۔۔۔۔۔۔۔اداریہ، آئینہ ابصار، ،ازقلم، صائمہ شاہ

اداریہ تحریر۔۔۔۔۔۔۔صائمہ شاہ بات یوں ہے کہ اچھے کام کی تعریف بھی ویسے ہی ضروری ہے جیسے ناجائز اقدامات اور ظلم کے خلاف صدائے احتجاج بلند کرنا۔ رواں حکومت اگرچہ بعض معاملات کے حوالے سے ایک عمومی سست روی کا شکار ہے، لیکن چند اچھے اقدامات میں ، ضلعی حکومتوں

مزید پڑھیے

نظم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صائمہ شاہ

سنو جاناں محبت کر تو لیتے ہیں مگر اتنا سمجھ لینا، محبت کانچ جیسی ہے کبھی یہ چاند بن کر وصل کی راتوں میں آتی ہے کبھی اشکوں میں ڈھل کر ہجر کے صدمے اٹھاتی ہے کبھی اک آگ بن جاتی ہے، جلتی اور جلاتی ہے محبت آنچ جیسی ہے

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فرحت عباس شاہ

تم جو مر جاؤ تو خالق کی رضا نے مارا میں ہی وہ ہوں کہ جسے ٹھیک قضا نے مارا َموت بر حق ہے یہ ایمان ہے میرا لیکن تم مجھے مار کے کہتے ہو خدا نے مارا ایک شاعر کہاں کر سکتا ہے خود کش حملہ تم مرو گے

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔ دل کی حالتوں پہ اب گفتگو اضافی ہے ہو بہ ہو کے قضئیے میں، من و تو اضافی ہے دید کا تقاضا ہے، دل کا دم بخود ہونا رو برو کے لمحوں میں، ہاوء ہو اضافی ہے ان کی دلنوازی پر بات آئے گی ورنہ دل کے آئینے میں

مزید پڑھیے

بس اب کے اتنی تبدیلی ہوئی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی

موجودہ حکومت جب "جمہوریت” کے پیٹ میں تھی تو تبدیلی تبدیلی کا وہ شور پڑنا شروع ہوا جو آج تک تھمنے میں نہیں آتا۔ تبدیلی کا لفظ اس طرح اس نئے حکومتی نظم و نسق سے پیوست ہوا کہ اب تبدیلی کہتے ہی عمران خان اور حواری اور ان کے

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔احمد منیب

چاند نکلا تو سمندر کے کنارے جاگے لوگ سب سو گئے تب درد کے مارے جاگے ہر ستارے کو بتا دو جو ہیں راتوں کے الم جو ہمارا ہے وہی ساتھ ہمارے جاگے حبس ایسا تھا کہ تحریر کا دم گھٹتا تھا اس نے لکھا تھا تو حرفوں کے ستارے

مزید پڑھیے

پنجابی غزل۔۔۔۔۔۔۔۔ایوب کموکا

غزل ترے ہتھ دے اشارے تے کھلوتاں اجے دوجے کنارے تے کھلوتاں جے اکھ جھمکی تے ڈگنائیں وانگ اتھرو میں پلکاں دے چبارے تے کھلوتاں بنا کے ریت دے گھر پانیاں تے دعاواں دے سہارے تے کھلوتاں ہوا نکلی تے آجاناں ایں تھلے میں ساہواں دے غبارے تے کھلوتاں توں

مزید پڑھیے

پنجابی غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی

غزل اوہلا چانن پی جاندا اے ویلا پھٹ نوں سی جاندا اے تینوں ویکھ کے اندرو اندری آپے دل پرچی جاندا اے آوندا جاندا ویکھ لیا کر جھلیا ، تیرا کی جاندا اے سدھراں نوں گل گھوٹو دے کے بندہ مر مر جی جاندا اے آس جے تیتھوں پھٹ نہ

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صائمہ امینہ شاہ

غزل یہ میری آنکھوں کے جگنوؤں میں جو اک چمک ہے تمہیں نا دے دوں یہ میرے چاروں طرف جو پھیلی ہوئی دھنک ہے، تمہیں نا دے دوں زمانے بھر کی ہے خاک چھانی، تھکن کے صحرا میں پاؤں چھلنی تمہیں نہ پا کر جو دل میں ٹھہری ہوئی کسک

مزید پڑھیے

Send this to friend