ہوم / زبان و ادب / طفلِ سِن رسیدہ- ستیہ پال آنند

طفلِ سِن رسیدہ- ستیہ پال آنند

طفلِ سِن رسیدہ

(ستیہ پال آنند)

سو برس کا میں کب تھا، منشی ِ وقت؟

کب نہیں تھے؟ ذرا بتاؤ تو
تم یقیناًکہو گے، بچپن میں
کھیلنے کودنے میں وقت کٹا
جب شباب آیا تو ؟…کہو، ہاں کہو
کیا برومند، شیر مست ہوئے؟
کیا جفا کش تھے؟ بے جگر؟ کرّار؟
آمرِوقت کوکوئی چیلنج؟
سرکشی تختِ مستبد کے خلاف؟
کیا رہے یار باش لوگوں کی
صحبتِ ناؤ نوش میں مدہوش؟
جی نہیں، ایسی کوئی بات نہیں!
تم رہے بند کتب خانوں میں
وہ کتابیں بھی چاٹ لیں تم نے
جن کو دیمک نے بد مزہ سمجھا!
اس جوانی میں تم رہے مصروف
(جس میں سب لوگ عیش کرتے ہیں!)
منطقی پخت و پز کی کاوش میں!
لفظ بینی کی خشک عادت نے
!!موٹے چشمے سے ڈھانپ دیں آنکھیں
تم نے سیکھے عجب ذہانت سے
ُاُتر میمانسا، سمکھیا، یوگ
نیائے، ویدانت اور گیتا گیان
فکر فی نفسہ ، ارتسام و خیال
عینیت، مادیت، ورائے وجود
صوفیانہ مراقبہ، عرفان
……یہ کہولت زدہ بزرگی کے
گرد آلود فلسفے ہیں، جنہیں
اپنی نو خاستہ جوانی میں
تم نے سرمیں انڈیل کر سوچا
’’اب کلیسا، کلس، حرم ،مینار
جامعات اور ان کا بحرِ علوم
میری جاگیر ہیں ، مری املاک
میں ہوں ذی علم، جیدِ عالم!‘‘
زیست کا نیم پختہ آدھا گیان
کلمتہ الحق سمجھ لیا تم نے
اور اک جست میں لڑکپن سے
ہو گئے پیر زال، شیخ البیت!

منشیِ وقت نے کہا ….دیکھو
تم نے حدِ بلوغ سے پہلے
اپنی بے رِ یش کم سنی کے فقط
بیس برسوں میں جی لیا صد سال
!اور اب طفلِ سِن رسیدہ ہو

مصنف طاہر بھٹی

Check Also

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مدبر آسان

غزل ہم کہ خود اپنے ہی ہونے کا نشاں بھول گئے اب اسی سوچ میں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Send this to friend