ہوم / زبان و ادب / غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چوہدری محمد علی مضطر

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چوہدری محمد علی مضطر

کچھ وہی لوگ سرفروش رہے
موت کا ڈر نہ جن کو ہوش رہے

آپ نے بات بات پر ٹوکا
ہم سردار بھی خموش رہے

کس قدر وضعدار ہیں ہم لوگ
قبر میں بھی سفید پوش رہے

ہم خطا کارتھے بہر صورت
وہ بہر حال عیب پوش رہے

بیٹھے بیٹھے وہ انقلاب آیا
رندِ باقی نہ مے فروش رہے

ہم نے اک بات سرسری کی تھی
آپ کیوں عمر بھر خموش رے

ڈھل چکا دن، اتر گئے دریا
ولولے ہیں نہ اب وہ جوش رہے

ان کے ہو جاؤ تم اگر مضطر!
فکرِ فردا نہ فکرِ دوش رہے

(چوہدری محمد علی مضطر عارفی)

مصنف طاہر بھٹی

Check Also

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرزا محمد افضل، کینیڈا

خواب در خواب ہراک سمت سیاحت کی ہے ​​​​نیند در نیند کئی نوع کی مسافت

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Send this to friend