ہوم / زبان و ادب /  غزل۔۔۔۔۔۔۔چوہدری محمد علی مضطر عارفی

 غزل۔۔۔۔۔۔۔چوہدری محمد علی مضطر عارفی

غزل

شور ہونے لگا پتنگوں میں
روشنی بٹ گئی ہے رنگوں میں

کیسے کیسے جوان مارے گئے
حرف وصوت وصدا کی جنگوں میں

اس میں کچھ آنکھ کا قصور نہیں
رنگ ہی مل گئے ہیں رنگوں میں

رات جب روشنی قریب آئی
فاصلے بڑھ گئے پتنگوں میں

ان کو ایفائے عہد کا ہے خیال
ہے شرافت ابھی لفنگوں میں

آنکھ لڑتی،زباں جھگڑتی ہے
زندگی گھر گئی تلنگوں میں

کیا ملا تھا معاوضہ اے دل
توبھی زخمی ہوا تھاجنگوں میں

آندھیاں بھی نہ ان کوکھول سکیں
ایسی گرہیں پڑیں پتنگوں میں

کاش ! اپنا شمار ہو جائے
تیری درگاہ کے ملنگوں میں

ان کو ڈر ہے کہ اب کے مضطر بھی
گھِر نہ جائے کہیں اُمنگوں میں

(چوہدری محمد علی مضطر عارفی)

مصنف طاہر بھٹی

Check Also

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔رشید ندیم، کینیڈا

غزل ہوا رہے گی مرا نقشِ پا نہیں رہنا مجھے خبر ہے مرے بعد کیا

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Send this to friend