ہوم / زبان و ادب / غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صفوان احمد ملک

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صفوان احمد ملک

منتشر سوچوں سے لفظوں پر نہیں اب اختیار
چھین لے یادوں کو میری لفظ دے دے مستعار

پھر کوئے جاناں میں رسوا ہو رہا ہے آدمی
پھر وہی تلخی کے دن ہیں پھر وہی در در کی مار

اُس کی یادوں کے دیے کی لَو جو تھرّاتی رہی
فرض کی راہوں پہ دوڑا بے رکاب و بے مہار

کون کس کو اب یہاں پر راہبر اپنا کرے
ہر کوئی مغرور خود میں ہر کوئی رکھے غبار

اِک تھپیڑے نے اکھاڑے پیر جو میرے تو اب
ہر گھڑی کی لغزشوں سے ہو گیا ہوں نابکار

تھک گیا ہوں روز و شب کے اَن گنت بہروپ سے
اے میرے اندر کے مولا اب میری صورت نکھار

مصنف طاہر بھٹی

Check Also

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرزا محمد افضل، کینیڈا

خواب در خواب ہراک سمت سیاحت کی ہے ​​​​نیند در نیند کئی نوع کی مسافت

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Send this to friend