ہوم / زبان و ادب / سید وحیدالزمان شاہ………..غزل

سید وحیدالزمان شاہ………..غزل

(سید وحیدالزمان شاہ)

پھول خوشبو سے بھر گیا ہو گا
شاخ سے پھر اتر گیا ہوگا

پیار پر کس کا زور چلتا ہے
جو نہ کرنا تھا کر گیا ہوگا

وہ اندھیرے سے خوف کھاتا ہے
روشنی سے بھی ڈر گیا ہوگا

سر ابھی بھی قفس کے اندر ہے
یعنی باہر تو پَر گیا ہوگا

دیکھنا دل یہیں کہیں ہوگا
اسکے پیچھے تو سر گیا ہوگا

آئینے کو تیری ضرورت تھی
دیکھتے ہی سنور گیا ہوگا

مصنف طاہر بھٹی

Check Also

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔رشید ندیم، کینیڈا

غزل ہوا رہے گی مرا نقشِ پا نہیں رہنا مجھے خبر ہے مرے بعد کیا

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Send this to friend