ہوم / حقوق/جدوجہد / غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صائمہ شاہ

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صائمہ شاہ

دیے کو پھونک ماری جا رہی ہے
شبِ فرقت گزاری جا رہی ہے

تمہارا راستہ ہے جس جگہ پر
وہیں منزل ہماری جا رہی ہے

تمہاری آنکھ میں دیکھا ہے خود کو
تو کیا قسمت سنواری جا رہی ہے؟

یہ کس حسرت کے پیچھے لے کے مجھ کو
مری بے اختیاری جا رہی ہے

جہاں تم ہو، تمہاری آہٹیں ہیں
وہیں بادِ بہاری جا رہی ہے

Saima shah

مصنف طاہر بھٹی

Check Also

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرزا محمد افضل، کینیڈا

خواب در خواب ہراک سمت سیاحت کی ہے ​​​​نیند در نیند کئی نوع کی مسافت

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Send this to friend