ہوم / حقوق/جدوجہد / طے شدہ مسئلہ۔۔۔۔۔۔۔۔از قلم ارشاد عرشی ملک

طے شدہ مسئلہ۔۔۔۔۔۔۔۔از قلم ارشاد عرشی ملک

"طے شدہ مسئلہ”‬

‎( ایک مسئلہ جو سن چوہتر تک نوے سالہ مسئلہ کہلاتا تھا،اب طے شدہ مسئلہ کہلاتا ہے)

‎ارشاد عرشیؔ ملک

‎مَت کہو مہرباں،طے شُدہ مسئلہ
‎ہے مسائل کی ماں  ،طے شُدہ مسئلہ

‎لب پہ مہرِ خموشی لگائے ہوئے
‎رہ گیا بے زباں ،”طے شُدہ مسئلہ

‎سالہا سال تک کیوں چھپاتے رہے؟
‎قوم سے قصہ خواں ،طے شُدہ مسئلہ

‎بات کرنےکی اُس پر اجازت نہیں
‎پھر بھی وِردِ زباں ،طے شُدہ مسئلہ

‎بنتا رہتا ہے ،وقتا ًفوقتاً یہاں
‎دین کا امتحاں ،طے شُدہ مسئلہ

‎اُن سے کیا بات ہو عقل اور فہم کی
‎جن کا زورِ بیاں ،طے شُدہ مسئلہ

‎مولوی کا چراغِ الہ دین ہے
‎اُس کے دیں کی ہے جاں ،طے شُدہ مسئلہ

‎بغض و نفرت ،تعصب کے اظہارکی
‎ایک چلتی دُکاں ،طے شُدہ مسئلہ

‎اُس جگہ اَب مسائل کا انبار ہے
‎حل ہوا تھا جہاں، طے شدہ مسئلہ

‎تم یہ سمجھے ،تمہیں کامیابی ملی؟
‎جگ میں ہے کامراں ،”طے شُدہ مسئلہ

‎کلُ جہاں میں بڑی شان سے کر گیا
‎چرچائے قادیاں،طے شُدہ مسئلہ

‎وہ جو اک اور 72 میں اشکال تھیں
‎کر گیا سب عیاں ،طے شُدہ مسئلہ

‎ایک پھندے کی صورت ہے لٹکا ہوا
‎بخت کے درمیاں ،طے شُدہ مسئلہ

‎کاٹ سے اِس کی بچتا نہیں طعنہ زن
‎ایک تیغِ بُرآں ،طے شُدہ مسئلہ

‎دار تک اپنے ہیرو کو لے کر گیا
‎بن کے عبرت نشاں ،طے شُدہ مسئلہ

‎ایک آمر پہ جا کر فضا میں گرا
‎بَن کے برقِ تپاں ،طے شُدہ مسئلہ

‎بھوت بن کر ڈراتا ہے شام و سحر
‎ہائے آسیبِ جاں ،طے شُدہ مسئلہ

‎جب ضرورت ہو باہر نکل آتا ہے
‎دفعتا ً ،ناگہاں ،طے شُدہ مسئلہ

‎دفن ہو کر اسمبلی کے ایوان میں
‎ہو گیا لا مکاں ،طے شُدہ مسئلہ

‎دیں کے تاجر ،اِسی سے کریں بوہنی
‎سب کے زیبِ دُکاں ،طے شُدہ مسئلہ

‎پھول کھلنے کی رُت روند کر بن گیا
‎اِک مسلسل خزاں ،طے شُدہ مسئلہ

‎چند شعروں میں عرشیؔ سمٹتا نہیں
‎اب ہے اِک داستاں ،طے شُدہ مسئلہ
‎۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مصنف طاہر بھٹی

Check Also

علامہ طاہر اشرفی کو چیلنج کا جواب الجواب، از قلم۔۔۔۔۔۔۔ ارمغان احمد داؤد

قصہ کچھ یوں ہوا کہ علامہ طاہر اشرفی صاحب نے قومی سیرت کانفرنس میں تقریر

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Send this to friend