ہوم / حقوق/جدوجہد / ٹوٹی انگلیوں کی دستک۔۔۔۔۔۔۔عرشی ملک

ٹوٹی انگلیوں کی دستک۔۔۔۔۔۔۔عرشی ملک

ٹُوٹی ہوئی اُنگلیوں کی دستک

(مشعال خان کے نام)

ارشاد عرؔشی ملک

نعرہِ تکبیر تھا ،اُن کے لبوں پر موجزن
پر عمل کفار جیسا،مُشرکوں جیسا چلن
بد نما عفریت اُس معصوم کی جانب بڑھا
زُعمِ تقویٰ کا بدن پر اوڑھ کر میلا کفن
اَن گنت منحوس ،وحشی ،قاتلوں کے درمیاں
دید کے قابل تھا
اے مشعال تیرا بانکپن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اِک نہتے بے خبر پر دن دیہاڑے پل پڑے
وقت گم سُم ہو گیا
لمحات تھے ساکن کھڑے
تھا جنونِ مذہبیت ،اُن کے سَر کو چڑھ گیا
ہو گئی فطرت مسخ اور باؤلا پن بڑھ گیا
اپنا ہی ساتھی لگا ،اُن سب کو اِک آساں شکار
اس کی جاں لینے کو دوڑے
وہ درندے خون خوار
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جُرمِ ناکردہ کی دے کر اِک بہادرکو سزا
گھونٹ کر ناپاک ہاتھوں سے گلا انصاف کا
اپنے فعلِ بد کو پہنانے لگے پھربرملا
دین کے ناموس میں لِپٹی تقدس کی قبا
تاکہ اس کی آڑ میں حاصل کریں دادِ جفا
آخرش بنتے ہیں ہیرو،قتل کے مجرم یہاں
بس اِسی نُکتے نے بڑھایا تھا اُن کا حوصلہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
روز و شب
تاریک راہوں میں ہیں مارے جا رہے
ظلمتوں کے دیس میں
کتنے جواں ،روشن خیال
بربریت کی گلی کوچوں میں ہے ہر پل دھمال
درس گاہوں میں مگر عؔرشی قہر ایسا نہ تھا
یہ شہادت اس لئے، اِک انتہا کی ہے مثال
سوچتی ہوں
دیکھ کر میں لاش تیری پائمال
کیا خبر کہ رنگ لے آئے لہو تیرا مشعال
کیا خبر؟ نوعِ بشر کی سوچ میں آئے اُبال
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا خبر چھٹ جائیں یہ نفرت کی کالی بدلیاں
گھپ اندھیرے میں بنا
جاں دے کے تُو بدرِ منیر
ہائے یہ زخموں بھرا کچلا ہوا خستہ بدن
کہہ رہا ہے
لاش پر ناچا تری جَمِ غفیر
پر ،ترے بُوٹوں تلے مَسلے ہوئے معصوم لب
کر گئے خاموش رہ کر بھی زمانے کو اسیر
تیری ٹوٹی اُنگلیوں نے
دی تو ہے دستک مگر
دیکھئے کب جاگتا ہے ،نوعِ انساں کا ضمیر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مصنف طاہر بھٹی

Check Also

Rabwah visit by LUMS Students creates unrest ; by Raye Sijawal Ahmed Bhatti

Recently, a group of students from University of Management Sciences(LUMS) visited Rabwah. The city of

One comment

  1. بہت ہی اعلیٰ رنگ میں بیان کیا ۔اللہ اس قوم کو عقل دے

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Send this to friend