ہوم / زبان و ادب

زبان و ادب

ادب پہلا قرینہ ہے محبت کے قرینوں میں

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔صابر ظفر

‎غزل ‎الہام ، خواب ، یاد ، اشارہ ، خبر ، خیال ‎مقدور کچھ نہیں تو ہے جانے کدھر خیال ‎سوچا گیا تجھے تو حقیقت ہوئ عیاں ‎پیدا ہوا ہے تیرے تصور سے ہر خیال ‎نازاں ہوں میں کہ مدحت _ مولا مرا نصیب ‎تائید _ ایزدی سے ہوا معتبر

مزید پڑھیے

سیڑھیاں عشق کی تھیں یا کوئی مقتل گاہ۔۔۔۔۔سعدیہ تسنیم سحر، جرمنی

قدم آہستہ آہستہ سیڑھی پر رکھے جا رہے تھےگویاکشمکش میں ہوں ایک دل کچھ کہتا ہے اور ایک دل کچھ۔ ایک وقت تھا جب اُسکی نئی نئی شادی ہوئی تھی اور اوپر والے کمرے میں دلہا کےدوستوں نے خوبصورت مسہری بنائی تھی ساتھ ساتھ کرکے پورے بیڈ کے گرد اتنی

مزید پڑھیے

راجہ یوسف کے مجموعہ کلام، تشنگی کی تقریب رونمائی۔۔۔۔۔۔ رپورٹ

راجہ یوسف کے مجموعۂ کلام ’’ تشنگی ‘‘ کی تقریبِ رونمائی ’’ تشنگی ‘‘ کا سرسری مطالعہ بھی یہ بتانے کے لئے کافی ہے کہ زبان و بیان پر یوسف کی گرفت بہت صالح اور مضبوط ہے۔ دلپذیر اور با موقع الفاظ کا خوبصورت انتخاب، اِن الفاظ کی بندش اور

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محمد سلیم طاہر

مہک سکون میں ہے رنگ اضطراب میں ہیں کسی کے پھول ابھی تک مری کتاب میں ہیں بس ایک ایڑھ لگانے کی دیر ہے باقی لگام ہاتھ میں پاؤں مرے رکاب میں ہیں یہ کون روز نیا آفتاب بھیجتا ہے یہ کس کے چرچے محبت کےماہتاب میں ہیں ابھی خرد

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مدبر آسان

غزل ہم کہ خود اپنے ہی ہونے کا نشاں بھول گئے اب اسی سوچ میں گُم ہیں کہ کہاں بھول گئے آج بھی فرصتِ یک لمحہ نہیں تھی لیکن تو جو آیا تو سبھی تو کارِ جہاں بھول گئے وہی ناموسِ سخن کے لئے صف بستہ ہیں آج قصرِ سلطاں

مزید پڑھیے

نظم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صائمہ شاہ

سنو جاناں محبت کر تو لیتے ہیں مگر اتنا سمجھ لینا، محبت کانچ جیسی ہے کبھی یہ چاند بن کر وصل کی راتوں میں آتی ہے کبھی اشکوں میں ڈھل کر ہجر کے صدمے اٹھاتی ہے کبھی اک آگ بن جاتی ہے، جلتی اور جلاتی ہے محبت آنچ جیسی ہے

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فرحت عباس شاہ

تم جو مر جاؤ تو خالق کی رضا نے مارا میں ہی وہ ہوں کہ جسے ٹھیک قضا نے مارا َموت بر حق ہے یہ ایمان ہے میرا لیکن تم مجھے مار کے کہتے ہو خدا نے مارا ایک شاعر کہاں کر سکتا ہے خود کش حملہ تم مرو گے

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔ دل کی حالتوں پہ اب گفتگو اضافی ہے ہو بہ ہو کے قضئیے میں، من و تو اضافی ہے دید کا تقاضا ہے، دل کا دم بخود ہونا رو برو کے لمحوں میں، ہاوء ہو اضافی ہے ان کی دلنوازی پر بات آئے گی ورنہ دل کے آئینے میں

مزید پڑھیے

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔احمد منیب

چاند نکلا تو سمندر کے کنارے جاگے لوگ سب سو گئے تب درد کے مارے جاگے ہر ستارے کو بتا دو جو ہیں راتوں کے الم جو ہمارا ہے وہی ساتھ ہمارے جاگے حبس ایسا تھا کہ تحریر کا دم گھٹتا تھا اس نے لکھا تھا تو حرفوں کے ستارے

مزید پڑھیے

پنجابی غزل۔۔۔۔۔۔۔۔ایوب کموکا

غزل ترے ہتھ دے اشارے تے کھلوتاں اجے دوجے کنارے تے کھلوتاں جے اکھ جھمکی تے ڈگنائیں وانگ اتھرو میں پلکاں دے چبارے تے کھلوتاں بنا کے ریت دے گھر پانیاں تے دعاواں دے سہارے تے کھلوتاں ہوا نکلی تے آجاناں ایں تھلے میں ساہواں دے غبارے تے کھلوتاں توں

مزید پڑھیے

Send this to friend