ہوم / حقوق/جدوجہد / غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرزا محمد افضل، کینیڈا

غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرزا محمد افضل، کینیڈا

خواب در خواب ہراک سمت سیاحت کی ہے
​​​​نیند در نیند کئی نوع کی مسافت کی ہے

​​​​روشنی یونہی نہیں من میں میرئے درآئی
​​​​روز و شب میں نے کئی پہر ریاضت کی ہے

​​​​درد پہ در د ملے کُھلتے گئے باب ِ قبول
​​​​اشک در اشک میرئے دل نے ندامت کی ہے

​​​​کون کرتا ہے کسی غیر سے دل کی باتیں
​​​​آپ کو اپنا سمجھ کر ہی جسارت کی ہے

​​​​میں تہی دست صدا دے کے چلا ہی جاتا
​​​​اُس نے اِس در پہ ٹہرنے کی ہدایت کی

​​​​ناگہاں کس نے محبت سے پکارا مجھکو
​​​​نا گہاں کس نے میرے دل پہ عنایت کی ہے

​​​​ایک پل وصل کا کچھ ایسا غنیمت ٹہرا
​​​​ میں نے ہرلمحہ اسی پل کی حفاظت کی ہے

مرزا محمد افضل، ٹورانٹو، کینیڈا

Sponsers

مصنف admin

Check Also

خواب اس آنکھ میں بھریں کیسے۔۔۔۔!غزل۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی

خواب اس آنکھ میں بھریں کیسے۔۔۔۔!غزل۔۔۔۔۔۔طاہر احمد بھٹی دیپ کچھ تھے ، مگر جلے ہی

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Send this to friend