ہوم / پنجابی پیج / لوہڑی پنجابی تہوار۔۔۔۔۔۔۔۔تحقیق از سالار کوکب

لوہڑی پنجابی تہوار۔۔۔۔۔۔۔۔تحقیق از سالار کوکب

ایک مغل بادشاہ کے اہل کار نے ایک خوبصورت ہندو لڑکی کو اغوا کرکے حرم میں داخل کرنے کا ارادہ کیا۔ دلے بھٹی کو اطلاع ملی۔ وہ لڑکی کو جنگل میں اپنی پناہ گاہ میں لے گیا۔ وہاں ایک ہندو لڑکے کے ساتھ اس کی شادی رچائی ۔اس شادی میں نہ ماں باپ تھے اور نہ پنڈت ۔ دلے نے آگ جلائی ۔خود ہی کنہیا دان کیا اور خود ہی پنڈت بنا ۔ دلے نے لڑکی کو ایک سیر شکر کا تحفه دیا۔مسلمان دلے بھٹی کو شادی کے منتر نہیں آتے تھے سو پھیروں کے دوران یہ پڑھنا شروع کیا :
سندر مسدرئیے
(خوبصورت لڑکی )
تیرا کون وچارا
(تمہارے متعلق کون سوچتا ہے؟ )
دلّا بھٹی والا
( بھٹی قبیلے کا دلا )
دلے دھیی وہائی
(دلے نے بیٹی کی شادی کی )
سیر شکر پائی
(اسے ایک سیر شکر دی )
کڑی دا لال پٹاکا
(لڑکی نے سرخ کپڑے پہن رکھے ہیں )
کڑی دا سالو پاٹا
(لڑکی کی شال پھٹی ہوئی ہے )

یہ ان روایتوں میں سے ایک ہے جو پنجابی ہر سال جنوری میں منائےجانے والے تہوار لوہڑی کے پس منظر کے طور پر بیان کرتے ہیں اور یہ گیت لوہڑی کا ایک گیت ہے ۔ ہندو اور سکھ پورا سال لوہڑی کا انتظار کرتے ہیں ۔لوہڑی والے دن بچے لوہڑی گاتے ہوئے گھر گھر جاتے ہیں اور ٹافیاں، مٹھائیاں اور پیسے لیتے ہیں۔ شام کے وقت آگ کے گرد دلے بھٹی کی یاد میں لوہڑی کے گیت گائے جاتے ہیں ۔ پاکستانی پنجابیوں کو جن کے علاقے کا مسلمان دلا بھٹی دوسروں کی عزتوں کو بچاتا تھا، یہ تفصیل نہیں پتہ ہے اور ان کی نئی نسل کو پتہ ہی نہیں کہ لوہڑی کیا ہے۔
تحقیق از ، سالار کوکب

مصنف طاہر بھٹی

Check Also

Censorship Never Conceals the Truth! By Waseem Altaf

Fiaz International Festival was held at Lahore from 16-18 November, 2018. Javed Akhtar and Shabana

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Send this to friend